ملتان(صفدربخاری سے) ڈائریکٹر جنرل ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن پنجاب محمد علی نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت کی جانب سے منشیات کی روک تھام اور اس مکروہ کاروبار میں ملوث عناصر کو کیفرکردار تک پہنچانے کے لیئے ملتان سمیت صوبہ بھر میں 4 نارکوٹکس تھانوں کے قیام کی منظوری دے دی گئی ہے  اور جلد تھانوں کے قیام کے لیئے فنڈز کا اجراء بھی متوقع ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملتان آمد کے بعد ایکسائز افس میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا اس موقع پر ڈائریکٹر ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ملتان ڈویژن عبداللہ خان جلبانی، ڈائریکٹر نارکوٹکس جنوبی پنجاب افتخار احمد بھلی، ڈائریکٹر ایکسائز ڈی جی خان شاہد علی گیلانی، ڈسٹرکٹ آفیسر ایڈمن خالد حسین قصوری ،ای ٹی اوز عارف شیخ، عبدالمجید قریشی، حافظ محمد جمیل، وہاڑی بشیر احمد کھرل، خانیوال اعجاز محمود ، لودھراں ماجد لطیف بٹ اور دیگر افسران بھی موجود تھے، ڈی جی ایکسائز نے مزید کہا کہ گاڑیوں کی رجسٹریشن سسٹم کو اپڈیٹ کرنے میں کچھ مسائل پیش آرہے ہیں جس سے سائلین کو بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے تاہم بہت جلد رجسٹریشن سسٹم مکمل طور پر فعال ہوجائے گا ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ پنجاب ریونیو اتھارٹی (پی آر اے) حکام پراپرٹی ٹیکس کی ریکوری کا چارج لینے میں دلچسپی رکھتے ہیں تاہم اس کا فیصلہ محکمہ کی ٹیکس ریکوری میں بہتر کارکردگی پر ہی ممکن ہے توقع ہے کہ محکمہ ایکسائز کے افسران و ملازمین مقررہ ٹیکس اہداف کو یقینی بناتے ہوئے ادارے کا ہرممکن دفاع کریں گے قبل ازیں ڈائریکٹر ایکسائز آفس میں افسران سے میٹنگ کے دوران ملتان ڈویژن کی ٹیکس ریکوری رپورٹ چیک کرتے ہوئے خانیوال اور لودھراں آفسز کی ٹیکس ریکوری کو مایوس کن قرار دیتے ہوئے انہوں ڈائریکٹر ایکسائز عبداللہ خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ پراپرٹی سرکلز کے جن انسپکٹرز کی ریکوری 50 فیصد تک ہے انہیں شوکاز نوٹسز جاری کیئے جائیں جبکہ بہتر کارکردگی کے حامل سٹاف کو تعریفی اسناد دی جائیں انہوں نے مزید کہا کہ ہفتہ وار 2 روز روڈ چیکنگ کی جائے تاہم اس بات کا خیال رہے جن گاڑیوں کے سال بھر کے ٹوکن ٹیکس شارٹ ہوں ان سے یقین دہانی لے کر ریلیف دیا جائے جبکہ دیگر عادی ٹیکس نادہندگان کے خلاف کوئی رعایت نہ برتی جائے، بعد ازاں ڈی جی ایکسائز پنجاب لاہور کے لیئے روانہ ہوگئے،